22

حکومت نے آئی ایم ایف کو گیس کی قیمت اور پیٹرولیم لیوی بڑھانے کی یقین دہانی کرادی

اسلام آباد(روزنامہ استحکام) پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان ورچوئل مذاکرات ہوئے جس میں حکومت نے آئی ایم ایف کو پیٹرولیم لیوی اور گیس کی قیمت بڑھانے سمیت ٹیکس وصولیوں کا ہدف حاصل کرنے کی یقین دہانی کرادی جب کہ آئی ایم ایف نے بجلی پر سبسڈی ختم کرنے کا مطالبہ کردیا۔

وزارت خزانہ کے ذرائع کا کہنا ہے کہ پاکستان کے آئی ایم ایف جائزہ مشن کے ساتھ ہونے والے ورچوئل مذاکرات میں پاکستانی ٹیم کی قیادت سیکریٹری خزانہ حامد یعقوب شیخ نے کی جبکہ آئی ایف ٹیم کی سربراہی جائزہ مشن کے سربراہ ناتھن پورٹر کررہے تھے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ آئی ایم ایف کو سیلاب سے متعلقہ منصوبوں پر آنے والے اخراجات کی تفصیلات سے بھی آگاہ کیا گیا۔ آئی ایم ایف کے ساتھ ورچوئل مذاکرات میں اہم پیش رفت کے بعد آئی ایم ایف کے ساتھ گلے اقتصادی جائزہ کی تکمیل اور پروگرام ٹریک پر لانے کے لیے فیزیکل مذاکرات کا شیڈول طے پانے کے امکانات ہیں اور توقع کی جارہی ہے کہ رواں ہفتے آئی ایم ایف سے شیڈول بارے اہم پیش رفت ہوگی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ مذاکرات میں آئی ایم ایف کو ملک کی موجودہ اقتصادی صورتحال اور اقتصادی اعشاریوں کے بارے میں بریفنگ دی گئی۔ علاوہ ازیں رواں مالی سال کیلئے مقرر کردہ ٹیکس وصولیوں کا ہدف حاصل کرنے کیلئے زیر غور ریونیو اقدامات اور توانائی کے شعبے میں متوقع اہم فیصلوں کے بارے میں بھی آگاہ کیا گیا۔

ذرائع کے مطابق پاکستانی وفد نے آئی ایم ایف حکام کو گیس کی قیمتوں میں جلد اضافے کے متوقع فیصلے سے بھی آگاہ کیا، وفد نے بتایا کہ گیس کی قیمتوں میں اضافہ یکم جولائی 2022ء سے ہوگا، گیس کی قیمتوں میں اضافے کی منظوری جلد ہی کابینہ دے گی، ساتھ ہی گیس کے شعبے کا گردشی قرضہ بھی ختم کیا جارہا ہے، پیٹرولیم مصنوعات پر لیوی بھی مرحلہ وار بڑھائی جا رہی ہے۔

ذرائع کے مطابق آئی ایم ایف نے مطالبہ کیا کہ پاکستان روپے کی قدر میں کمی کو مصنوعی طریقے سے نہ روکے، بجلی پر سبسڈی بھی ختم کی جائے، ٹیکس کا جی ڈی پی تناسب بڑھانے کے لیے اقدامات کیے جائیں، مختلف شعبوں کو دیے گئے استثنیٰ بھی ختم کیے جائیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ آئی ایم ایف کا وزارت خزانہ حکام سے رواں ہفتے بات چیت کا امکان ہے، وزارت خزانہ حکام آئی ایم ایف کو تمام اہداف پر اعتماد میں لیں گے، ورچوئل مذاکرات پر مطمئن ہونے سے آئی ایم ایف مشن کا شیڈول طے پانے کا امکان ہے۔

یہ خبر بھی پڑھیں ۔۔۔۔۔ آئی ایم ایف کو واضح پیغام دیا آپ کی شرائط ماننے کو تیار ہیں: وزیراعظم

وزیراعظم شہباز شریف نے کہا ہے کہ عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف)کو واضح پیغام دے دیا ہے آپ کی شرائط ماننے کو تیار ہیں اور نویں جائزے کیلئے پروگرام مکمل کرنا چاہتے ہیں۔

اسلام آباد میں تقریب سے خطاب میں شہباز شریف کا کہنا تھاکہ آئی ایم ایف کوکہاہےہم نویں جائزہ کیلئے پروگرام مکمل کرنا چاہتے ہیں اور آئی ایم ایف نے واضح پیغام دیا کہ ہم پاکستان کے ساتھ ہیں اور مل کرپاکستان کومشکلات سےنکالیں گے۔

انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف کوواضح پیغام دیاہےکہ ہم آپ کی شرائط ماننے کو تیار ہیں، پاکستان کوبچانےکی جوذمےداری قبول کی اس کو آخری حدتک نبھائیں گے، قرضوں پرعیاشیاں کرنے کی اجازت نہیں۔

ان کا کہنا تھاکہ تیل کی امپورٹ پربچت کیلئے اعلانات سےزیادہ اقدامات کی ضرورت ہے، ایک صوبے کی حکومت نے رات ساڑھے 8 بجے دکانیں بندکرنے کیخلاف حکم امتناع لیا، پاکستان کوبچاناہےتو ہمیں سیاست کو قربان کرنا ہوگا، ایک اورصوبائی حکومت نے سیاسی پوائنٹ اسکورنگ کیلئے تاخیری حربےاستعمال کیے۔

وزیراعظم کا کہنا تھاکہ پاکستان کو بچانے کیلئے سیاسی کمائی قربان کردوں گا، ریاست بچانے کیلئے اپنی سیاسی کمائی قربان کرنے کیلئے تیار ہوں، پاکستان کےجوحالات ہیں سب کواس کی ذمےداری قبول کرناہوگی، اس حمام میں سب ننگے ہیں، ہماری اور مارشل لائی حکومتیں سب شامل ہیں، 75 سال میں ہم نے جو کچھ کیا اس کے نقصانات سامنے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں