53

آئی ایم ایف کا پاکستان کو فنڈنگ کی یقین دہانی کرانیوالے دوست ممالک سے براہ راست رابطہ

اسلام آباد(روزنامہ استحکام) پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان پالیسی لیول کے مذاکرات آج ( بدھ) کو اختتام پذیر ہونگے ۔پاکستان کے دورے پر موجود عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے مشن نے رواں مالی سال کے دوران پاکستان کو رول اوور اور اضافی فنانسنگ کی یقین دہانیوں کی تصدیق کے لیے اہم دوست ممالک کے ساتھ براہ راست رابطے شروع کر دیے ہیں ۔ذرائع کے مطابق پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان ایم ای ایف پی آج فائنل ہونے کا امکان ہے ۔

پالیسی لیول مذاکرات میں انٹرنل اور ایکسٹرنل گیپ پر بات چیت ہوگی،آئی ایم ایف نے روول اوورز اور بیرون ملک سے ملنے والی امداد پر اطمینان کا اظہار کردیا ہے۔آئی ایم ایف وفد نے پاکستان کے دوست ممالک سے براہ راست رابطے کیئے ،آئی ایم ایف وفد نے پہلے ملاقات متحدہ عرب امارات کے سفیر کے ساتھ کی ،آئی ایم ایف مشن چیف نیتھن پورٹرنی سفیر حمد عبید الرعابی سے فنڈز کے حوالے سے بات کی، آئی ایم ایف وفد سعودی سفیر سے بھی ملاقات کریگا ،

دوست ممالک کی طرف سے دی گئی کمٹمنس پوری کرنے کے عزم کا اعادہ کیا گیا ہے۔پلاننگ ڈویژن، ایف بی آر، ایس آئی ایف سی، پیٹرولیم ، اسٹیٹ بینک کے ساتھ بات چیت بھی کی ہے۔ ذرائع وزارت خزانہ کے مطابق کرنٹ اکاؤنٹ خسارے میں 2 ارب کی کمی کے باوجود تقریبا 4.5ارب ڈالرزکا گیپ رہ جائے گا ٹیکس وصولیوں کا ہدف حاصل کرنے پر بھی آئی ایم ایف کو مطمئن کیا گیا ہے ،کرنٹ اکاؤنٹ خسارے میں کمی سے ڈھائی ارب ڈالرزگیپ کم ہوجائے گا جبکہ آئی ایم ایف مشن بیرونی فنانسنگ کیلئے یقین دہانیاں حاصل کررہا ہے

۔ذرائع کا کہنا ہے وزارت خزانہ نے کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ6.5ارب ہدف کے مقابلے تقریبا4ارب ڈالرز رہنے کاتخمینہ لگایا ہے ،رواں مالی سال درآمدات ہدف سے تقریبا5ارب ڈالرزکم رہنے کا تخمینہ ہے ،درآمدات58.7 ارب ہدف کے مقابلے54ارب ڈالرز رہنے کا امکان ہے ،رواں مالی سال30 ارب ڈالرز برآمدات کا ہدف حاصل کرلیا جائے گا رواں مالی سال ترسیلات زر30 ارب ڈالرز سے زیادہ رہنے کا تخمینہ ہے ۔ ذرائع کے مطابق رواں مالی سال اوسط21فیصد مہنگائی کا ہدف حاصل کرلیا جائے گا،معاشی شرح نمو کا3.5 فیصد ہدف حاصل کئے جانے کی توقع ہے ۔درآمدات میں کمی سے ایف بی آر کی ٹیکس وصولی کو دھچکا لگے گا۔
٭٭٭٭

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں